Daily Systematic Metro EPaper News National and International Political Sports Religion
اہم خبریںدنیا

متحدہ عرب امارات میں نجی کمپنیوں کے ملازمین کو کروڑ پتی بنانے کی اسکیم

متحدہ عرب امارات کے چند کاروباری ادارے بچت اسکیم کے ذریعے پانچ سال میں اپنے ملازمین کو کروڑ پتی بنانے کی راہ پر گامزن ہیں لوگ خود بھی انفرادی سطح پر اپنے اہل خانہ کے لیے بچت کر رہے ہیں تاکہ پانچ سے سات سال میں وہ بھی مالی طور پر استحکام پاکر کروڑ پتی ہوسکیں۔

غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق متحدہ عرب امارات کی چند کمپنیاں اپنے انتہائی باصلاحیت ملازمین کو ہاتھ سے جانے نہیں دینا چاہتیں اور کروڑ پتی اسکیم جیسی پرکشش پیشکشیں کر رہی ہیں۔اس سلسلے میں نیشنل بانڈز کو بھی بروئے کار لایا جارہا ہے۔

مائی ون ملین اسکیم بھی مقبولیت سے ہم کنار ہو رہی ہے۔ یہ پلان گزشتہ اکتوبر میں متعارف کرایا گیا تھا۔ اس کے تحت کاروباری اداروں کے مالکان اور ملازمین ہر ماہ ایک خاص رقم جمع کراتے ہیں۔

اس سے حاصل ہونے والے منافع کو دوبارہ انویسٹ کردیا جاتا ہے۔ یوں ملازمین 10 لاکھ درہم کی منزل تک آسانی اور تیزی سے پہنچتے ہیں،نیشنل بانڈز کے گروپ سی ای او محمد قاسم العلی کہتے ہیں کہ بہت سے لوگ اپنی بچت اس اسکیم میں لگارہے ہیں تاکہ ملینیئر ڈرا میں اپنا نام شامل کراسکیں۔

ایک کمپنی نے مائی ون ملین منصوبے میں شرکت پر رضامندی ظاہر کی، طے پایا کہ ملازمین 7500 درہم جمع کرائیں گے اور اتنی ہی رقم کمپنی بھی دے گی، ایک اور کمپنی ماہانہ 10 ہزار روپے دے رہی ہے اور باقی رقم ملازمین دیتے ہیں۔

اس صورت میں اسٹاف کے سینئر ارکان تیزی سے لکھ پتی، کروڑ پتی بن سکتے ہیں، محمد قاسم العلی کہتے ہیں کہ کمپنیاں یہ طریقہ اپناکر اپنے بہترین ملازمین کو روکنا چاہتی ہیں، بچت اسکیم اپنانے والی بیشتر کمپنیاں درمیانے حجم کی ہیں جنہیں ٹیلنٹ کی زیادہ ضرورت ہوتی ہے۔

ریکروٹمنٹ ایکسپرٹس کا کہنا تھاکہ یو اے ای اور پڑوسی ریاستوں میں مقامی ٹیلنٹ کو بھی بروئے لانے پر بھی زور دیا جارہا ہے کیونکہ اس وقت دنیا بھر میں ٹیلنٹ کے حصول کی جنگ جاری ہے۔

مینا ریجن میں مرسر کے پرنسپل فار کریئرز اینڈریو ایلزین کہتے ہیں کہ مقامی اداروں کو اندرونِ ملک باصلاحیت افرادی قوت کے حصول میں مشکلات کا سامنا ہے۔ خطے کے دیگر ممالک کی کمپنیاں بھی باصلاحیت افرادی قوت کے حصول کے لیے غیر معمولی مسابقت کا سامنا کر رہی ہیں۔

اینڈریو ایلزین کہتے ہیں کہ طویل المیعاد اور قلیل المیعاد انسینٹیوز کے بارے میں بہت پوچھا جارہا ہے تاکہ کمپنیاں اپنے لیے انتہائی ضروری سمجھی جانے والی معیاری افرادی قوت کو کہیں اور جانے سے روک سکیں۔

کھڑکیاں اور دروازے بنانے والی ایک کمپنی نے اپنے 7 درمیانی سطح کے ملازمین کے لیے یہ اسکیم لی ہے، یہ کمپنی ٹیکنیشینز اور عام ورکرز کو اپنے پاس رکھنا چاہتی ہے، یہ ملازمین 4 ہزار درہم دیں گے جبکہ باقی رقم کمپنی دے گی تاکہ متعلقہ افراد 7 سال میں ملینیئر بن سکیں۔

Related posts

موٹروے سالٹ رینج پر گیس باؤزر حادثے کا شکار،6 افراد جاں بحق

Mobeera Fatima

برائلر مرغی کے گوشت کی قیمت میں 46 روپے کی بڑی کمی

Mobeera Fatima

کم سے کم صدقہ فطر 300 روپے مقرر، فدیہ بارے بھی شریعہ بورڈ کا اہم اعلان

Mobeera Fatima

Leave a Comment

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. قبول کریں۔ مزید پڑھیں

Privacy & Cookies Policy