Daily Systematic Metro EPaper News National and International Political Sports Religion
اہم خبریںمعیشت

پاکستان کا گردشی قرضہ 5.7 ٹریلین روپے تک پہنچ گیا

پاکستان کا گردشی قرضہ بڑھ کر 5.7 ٹریلین روپے تک پہنچ گیا ہے جو کہ جی ڈی پی کا 5.4 فیصد ہے، آئی ایم ایف کی جانب سے 3 بلین ڈالر کے بیل آؤٹ کے جائزے کے دوران مقرر کردہ 4 فیصد کی حد کو عبور کر گیا ہے۔

پاور سیکٹر کے اندر گردشی قرضہ 2.703 ٹریلین روپے ہے جبکہ گیس سیکٹر کا قرضہ 3.022 ٹریلین روپے ہے۔ آفس آف ریسرچ، انوویشن، اینڈ کمرشلائزیشن کے قائم مقام ڈائریکٹر فہیم جہانگیر خان نے ویلتھ پاک سے بات کرتے ہوئے کہا کہ پاور سیکٹر کے گردشی قرضے میں ایندھن کی عالمی قیمتوں میں اضافے اور آزاد پاور پروڈیوسرز کے ساتھ مہنگے، غیر پائیدار معاہدوں کی وجہ سے اضافہ ہوا۔

ان کا کہنا تھا کہ بجلی، پیٹرولیم اور قدرتی گیس کے شعبے گردشی قرضے میں سب سے زیادہ شراکت دار ہیں۔ آئی پی پیز کی اکثریت درآمد شدہ ایندھن پر مبنی پلانٹس ہیں جو مہنگی بجلی پیدا کرتے ہیں۔

نیپرا کی جانب سے تجویز کردہ نرخوں سے کم نرخوں کا تعین بجلی کے شعبے میں خسارے کا باعث بنتا ہے۔ ٹرانسمیشن اور ڈسٹری بیوشن کے زیادہ نقصانات اور بجلی کی تقسیم کار کمپنیوں کی جانب سے بلوں کی وصولی میں سستی گردشی قرضے میں اضافہ کر رہی ہے۔

بجلی کے زیادہ نرخوں کے ذریعے گردشی قرضے کو کم کرنے کی کوششیں مہنگائی میں اضافے، بجلی کی زیادہ بندش اور کاروباری لاگت میں اضافے کا باعث بنتی ہیں۔ اس سے سرمایہ کاری کی حوصلہ شکنی ہوتی ہے اور پیداواری صلاحیت کم ہوتی ہے۔نتیجتاً، یہ عوامل اجتماعی طور پر اقتصادی ترقی کو روکتے ہیں۔

نیپرا کے ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل فنانس جمیل اختر نے ویلتھ پاک کو بتایا کہ یہ وقت کی ضرورت ہے کہ بجلی کے بلوں کی بہتر وصولی کے لیے بجلی کی بڑی تقسیم کار کمپنیوں کو چھوٹے یونٹوں میں توڑا جائے، آئی پی پیز کے معاہدوں پر نظر ثانی کی جائے، لاگت کو آخر تک منتقل کیا جائے۔ صارفین اور ٹیرف کی تفریق سبسڈی کو کم کریں۔

انہوں نے مزید کہا کہ سبسڈی کے ہدف کو بہتر بنا کرملک اپنے گردشی قرضے کو کم کر سکتا ہے۔بجلی کے لیے سبسڈی دینے کے بجائے کم آمدنی والے گھرانوں کو براہ راست نقد رقم کی منتقلی سے گردشی قرضے کو کم کیا جا سکتا ہے۔ توانائی کی سبسڈی کے ساتھ بنیادی مسئلہ یہ ہے کہ وہ غیر ہدفی ہیں اور ان کا سب سے بڑا فائدہ اشرافیہ کا طبقہ ہے۔

Related posts

آرمی چیف جنرل عاصم منیر کی جانب سے قومی کرکٹرز کیلئے افطار ڈنر کا شیڈول تبدیل

Mobeera Fatima

ایک ماہ میں 20 کلو آٹے کا تھیلا 1000 روپے سستا ہوا، وزیر خوراک پنجاب

Mobeera Fatima

وفاقی وزیر عطا تارڑ نے قومی ورثہ ڈویژن کا اضافی چارج بھی سنبھال لیا

Mobeera Fatima

Leave a Comment

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. قبول کریں۔ مزید پڑھیں

Privacy & Cookies Policy